we find in jawahir-ul-kalam fi sharah shari’i-ul-islam, by sheikh mohammad hasan najafi; he said

فعن المجلسي أنه لا يبعد كون الشهادة بالولاية من الأجزاء المستحبة للأذان استنادا إلى هذه المراسيل

ترجمہ

علامہ مجلسی(رح) فرماتے ہیں کہ کوئ بعید نہیں اس میں کہ علی ولی الّلہ کا پڑھنا اذان کے اجزامستحبہ سے ہوا ہے اور دلیل اس کی مراسل روایت ہوں

allam majlisi said that it is not impossible that giving testimony of wilayat is mustahab/recommended in adhan, and the reason for this is the mursal narration

similarly, he said

ولا يقدح مثله في الموالاة والترتيب ، بل هي كالصلاة على محمد ( صلى الله عليه وآله ) عند سماع اسمه

ترجمہ

علی ولی الّلہ کے پڑھنے سے اذان کی ترتیب اور موالّاتہ مین کویی خامی پیدا نہیں ہوتی بلکہ یہ شہادت اسی طرح ہے کہ جس طرح نبی کریم(ص) کے نام مبارک کو سنّنے کے بعد درود شریف پڑھا جاتا ہے

it does not affect the arrangement and mawalat ( in adhan), it is like we recite salat upon hearing the name of holy prophet asws

[vol 9, kitab us salat, page 87,89]

translated from here, and you can see scans as well

 

 

 

 

 

Advertisements