Question

ابو بکر بن المقری رحمت اللہ علیہ کہتے ہیں کہ میں اور امام طبرانی رحمت اللہ علیہ اور ابو شیخ رحمت اللہ علیہ مدینہ طیبہ میں حاضر تھے کھانے کو کچھ ملا نہیں روزہ پر روزہ رکھا جب رات ہوئی عشاء کے قریب میں قبر اطہر پر حاضر ہوا اور عرض کیا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھوک، یہ عرض کر کے میں لوٹ آیا مجھ سے ابوالقاسم رحمت اللہ علیہ (طبرانی) کہنے لگے کہ بیٹھ جاؤ یا تو کچھ کھانے کو آئے گا یا موت آئے گی ابن المنکدر کہتے ہیں کہ میں اور ابو شیخ رحمت اللہ علیہ تو کھڑے ہو گئے طبرانی وہیں بیٹھے کچھ سوچتے رہیکہ دفعةً ایک علوی نے دروازہ کھٹکھٹایا ہم نے کواڑ کھولا تو ان کے ساتھ دو غلام تھے اور ان دونوں کے ہاتھ میں ایک ایک بہت بڑی زنبیل تھی جس میں بہت کچھ تھا ہم تینوں نے کھایا خیال تھا کہ یہ بچا ہوا یہ غلام کھائیں گے مگر وہ سب کچھ وہیں چھوڑ گئے اور وہ علوی کہنے لگے کہ تم نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے شکایت کی میں نے حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کی خواب میں زیارت کی حضور صلی علیہ وسلم نے حکم فرمایا کہ میں تمہارے پاس کچھ پہنچاؤں۔براہ کرم، اس پر روشنی ڈالیں کہ یہ شرک نہیں ہے؟

Abu Bakar bin Muqri says that I, Tabarani, and Abu Sheikh were in Madina. We did not get any food. We fasted again and again. When it got night, at times of I’sha, We went to Holy Prophet’s (asws) grave, and said: O Holy Prophet! Hunger. And we returned. Abu Qasim said: Sit, either food will come or death. Ibn Munkardi said: I and Abu Sheikh stood up. Tabarani sat there thinking of something. All of a sudden, an Alawi knocked at door. We opened it, and there were two slaves with him, who were holding a huge bag which had many things. We ate of it, and thought they will eat what is left, but they left it. That Alawi came and said: You had complained to Holy Prophet (asws), and I saw him in Dream. He ordered me to give you food. Please tell me is this not Shirk?

Answer

نہیں اس میں شرک کا کوئی شائبہ نہیں، اس واقعہ کو حافظ ذہبی نے تذکرة الحفاظ میں اور سیر اعلام النبلاء میں ذکر کیا ہے۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنی قبر مبارک میں حیات ہیں، قبر شریف پر حاضر ہوکر جو شخص درود پڑھتا ہے اسے وہ خود سنتے ہیں، اسی طرح دوسرا کوئی حال ذکر کیا جائے، تو اسے بھی سنتے ہیں، اپنا حال ذکر کرنے میں کوئی حرج نہیں بے شمار واقعات اکابر علماء صلحاء کے اس طرح کے موجود ہیں ان سے دعا کی درخواست کرنا جائز ہے، ہاں مدد چاہنا یا فریاد رسی کرنا جائز نہیں، ان حضرات نے صرف اپنا حال ذکر کیا جو کہ جائز ہے۔

No, there is no hint of doubt in this. This incident is mentioned by Dhabi in Tazkirat-ul-Huffaz, and Sair ‘alaam Nabala.

He (asws) is alive in His grave, and if someone recites Darood at His grave, He hears that. Samewise if someone mentions his issues, He hears that. There is no problem in mentioning that. Many incidents of Great Scholars and Pious people are present like this one. It is allowed to request Him for Prayers. But it is not allowed to ask him for help or complain of anything. These people just told him their situation, which is allowed

Please see the saying of Alawi in Red colour in Question, and see for Yourself if they were just telling their situation or complaining? If they were not complaining, why on Earth they did not negate him?

Anyways, Here is the Snapshot

grv

Advertisements