Deobandis are quite well known for their rigidity regarding seeking Help from others. A question was asked from their fatwa centre, and in that, they were given the reference where in their own scholars had pronounced sentences in which help was seeked from Holy Prophet (asws). Fatwa centre did not negate the reference, and said that if someone apparently says something which shows that He is seeking help, but He does not believe in that, then it wont be Shirk.

Let us see the fatwa. Here is the Question

مفتی صاحب!آپ نے( حضرت ) علی رضی اللہ عنہ سے مدد مانگنے کو شرک کہا ہے ، میں آپ کی بات سے متفق ہوں مگر علمائے دیوبند کے پیر کلیات امدادیہ ․․ صفحہ․․90-91 میں لکھا ہے کہ نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے مدد بھی مانگ رہے ہیں اور مشکل کشائی کے لیے پکار رہے ہیں تو کیا آپ اپنے پیر صاحب کو (نعوذ باللہ ) مشر ک کہیں گے؟ 

sir Mufti! You said that it is Shirk to ask Hazrat Ali for Help. I agree to that. but in Scholars of Deoband Kuliyat-e-Imdadiya, p. 90-91 it is written that helped is seeked from Holy Prophet, and He is called to remove Misery (Mushkil Kushai); so Will You call Your Scholar Mushrik?

Here is the reply

فتوی(ل):909=253tl-6/1431

ان جیسے مسائل کا تعلق نیت اور عقیدہ پر ہے، حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم، حضرت علی، حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی وغیرہم کو اس نیت اور عقیدہ سے پکارنا کہ وہ ہماری آواز سن کر ہماری رہبری اور مدد کریں گے، شرک ہے۔ البتہ اس عقیدہ سے خالی ہوکر محض جذبہ محبت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس طرح خطاب کرنا جس میں بظاہر استمداد کا شبہ ہو شرک نہیں جس طرح شعراء فرط محبت میں اپنی محبوبہ وغیرہ کو خطاب کرتے ہیں جب کہ ان کا عقیدہ یہ بالکل نہیں ہوتا کہ میرا محبوب حاضر اور سن رہا ہے بلکہ وہ فرطِ محبت میں اس طرح کلام کرتے ہیں اور گویا غایب کو دل میں حاضر کرکے اس سے حاضر جیسا معاملہ کرتے ہیں، ہمارے اسلاف واکابر سے جو اس طرح کے اشعار منقول ہیں وہ اسی قبیل سے ہیں اور اس کی دلیل حکیم الاسلام حضرت قاری محمد طیب صاحب رحمة اللہ کی کتاب ”علمائے دیوبند کا دینی رخ اور مسلکی مزاج“ ہے۔ حضرت نے اس کتاب میں علمائے دیوبند کے عقائد کو بسط وتفصیل سے لکھا ہے اور اس عقیدہ کی تردید کی ہے، جب کہ حضرت کی مشہور نعت ”نبی اکرم شفیع اعظم الخ“ میں خود کچھ ایسے جملے ہیں جن سے استمداد کا پتہ چلتا ہے۔ سائل بالعموم جاہل ہوتے ہیں اور وہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم ودیگر صحابہ واولیاء کو خطاب حاضر و ناظر اور ممد ومعاون سمجھ کر کرتے ہیں اس لیے ہ جواب لکھ دیا جاتا ہے جو سوال میں مذکور ہے، ہاں اگر کوئی اس عقیدہ سے خالی ہوکر ان کو اس طرح خطاب کرے جس میں استمداد کا شبہ ہو وہ اس میں شامل نہیں۔

 

These issues are related to intention and beliefs. Calling Holy Prophet, Hazrat Ali, sheikh Jilani etc with the intention that they will hear us, and guide and help us, this is Shirk. But if someone is free of this, and He calls with intention of Love in such a manner which gives impression of “Seeking Help”, then it is not shirk. Like poets will call their darlings in love, but they do not have this belief that they are hearing us, rather it is their extreme love, as if they presume the one who is absent, to be present, and act like that. Such poetry which is related to our Ancestors and Scholars, it is of this type. In proof, Qari Tayyab’s book “Ulma-e-Deoband ka Deni Rukh aur Maslaki Mizaj”; He explained concepts in detail, and negated this. But in his famous Na’at “Nabi Akram Shafi’i A’zam”, there are certain sentences which tell us of seeking help. Those who ask Questions, are usually ignorant, and they call upon them thinking of them as Present and seeing, and helper, so reply is given as has been mentioned in Question. But if someone is free of that belief, and calls them in such a way which gives impression of seeking help, then it is not included in that (Shirk).

 

hlp

 

 

 

Advertisements